تین سال کے دوران 301 ہندوستانی فوجیوں نے خود کشی کی:وزیر دفاع کا اعتراف

نئی دہلی: وزیر دفاع مملکت سبھاش بھامرے نے پارلیمنٹ میں اعتراف کیا ہے کہ 2014سے اب تک 301فوجیوں نے خود کشی کی جبکہ 11ایسے واقعات سامنے آئے ہیں جن میں فوجیوں نے اپنے ہی ساتھی سپاہیوں یا افسر کو گولی مار کر ہلاک کردیا۔انہوں نے کہا کہ فوج میں خود کشی اور ”برادر کشی“ (ساتھی فوجی کو گولی مارکر ہلاک کرنا) کے بڑھتے واقعات پر قابو پانے کی فوری ضرورت ہے۔ وزیر دفاع نے ایک رپورٹ پیش کرتے ہوئے بتایا کہ ہر سال 100 ایسے واقعات ہو رہے ہیں جن میں ہمارے فوجی خود کشی کر رہے اور اعصابی کشیدگی کا شکار ہو کر فائرنگ کر کے ایک دوسرے کو ہلاک کر رہے ہیں۔
انہوں نے کہا کہ خود کشی کرنے والوں میں9افسران اور 19جونیئر کمیشنڈ آفیسرز (جے او سیز) شامل ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ انتہائی افسوس ناک خبر یہ ہے کہ ایسی افسوسناک وارداتوں واقعات میں صرف فوجی ہی نہیں بلکہ بعض افسران بھی ذہنی تناو کا شکار ہو کر موت کے گھاٹ اتر چکے ہیں۔ بات اس قدر بڑھ گئی ہے کہ قابو سے باہر ہو رہی ہے اور بدنامی کا باعث بن رہی ہے ۔ رپورٹ میں بتایا گیا کہ رواں سال میں 44 فوجی خود کشی کر چکے ہیں ۔ واضح رہے کہ رواں سال میں 20روز قبل کشمیر کے اڑی سیکٹر میں لائن آف کنٹرول پر8راشٹریہ رائفلز بٹالین کے ایک فوجی نے میجر شیکھرتھاپا کو مار کر ہلاک کر دیا۔

Title: more than 300 army personnel committed suicide since 2014 govt | In Category: ہندوستان  ( india )