الہٰ آباد ہائی کورٹ نے تلوار جوڑے کوبیٹی اروشی اور ہیم راج قتل کیس میں بری کر دیا

الہٰ آباد: جسٹس اے کے مشرا اور جسٹس بی کے نرائن پر مشتمل الہٰ آباد ہائی کورٹ کی ایک ڈویژن بنچ نے آروشی قتل کیس میں شک کا فائدہ دیتے ہوئے دندان ساز تلوار جوڑے کو یہ کہہ کر بری کردیا کہ والدین نے بیٹی کا قتل نہیں کیا۔
واضح رہے کہ راجیش تلوار اور ان کی اہلیہ نوپور تلوار 2008میں اپنی بیٹی آروشی اور گھریلو ملازم ہیم راج کے قتل کے جرم میں غازی آباد میں سی بی آئی کی خصوصی عدالت سے2013نومبر میں سنائی گئی عمر قید کی سزا کاٹ رہے تھے۔ الہٰ آباد کی عدالت عالیہ نے تلوار جوڑے کے وکیل کی اس دلیل کو تسلیم کر لیا کہ جوڑے کے خلاف سارا کیس واقعاتی شہادتوں کی بنیاد پر پیش کیا گیا اور یہ کہ یہ جوڑا بے قصور ہے۔
عدالت نے جوڑے کو بری کرتے ہوئے یہ بھی کہا کہ سی بی آئی شک وشبہ سے پرے جرم ثابت نہیں کر سکی۔ 14سالہ اروشی تلوار 16مئی2008کو نوئیڈا کے جل وایو وہار میں واقع فلیٹ نمبر 32میں اپنے بیڈ وم میں خون میں لت پت پڑی پائی گئی تھی۔ اس کو گلا کاٹ کر ہلاک کیا گیا تھا۔
ملازم ہیم راج کی، جس پر ابتدا میں اروشی کے قتل کا شبہ ظاہر کیا گیا تھا، دوسرے روزخون میں نہائی لاش فلیٹ کی بالکونی میں پڑی پائی گئی۔

Title: allahabad high court acquits talwars in daughter aarushi hemraj murder case | In Category: ہندوستان  ( india )